جب قندیل کو قتل کیا گیا تو میں گھر میں ہی تھا

سوشل میڈیا کے ذریعے شہرت کی بلندیوں کو چھونے والی ماڈل قندیل بلوچ کے والد کا کہنا ہے کہ جب قندیل بلوچ کا قتل ہوا تو وہ گھر میں ہی موجود تھے۔ نجی ٹی وی جیو نیوز کے مطابق والد نے پولیس کو بیان دیا ہے کہ وہ اور ان کی اہلیہ اور بیٹا وسیم گھر پر تھے۔ وہ، اپنی اہلیہ اور بیٹے کے ساتھ چھت پر سو رہے تھے جبکہ قندیل بلوچ نیچے اپنے کمرے میں سوئی ہوئی تھی۔ قندیل بلوچ کو بھائی نے غیرت کے نام پر قتل کردیا وسیم رات کو 3 بجے چھت سے نیچے اترا اور کمرے میں جا کر قندیل بلوچ کا گلا دبا کر اسے قتل کر دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ جب وہ صبح نیچے آئے اور دس بجنے پر بھی قندیل بلوچ کمرے سے باہر نہ آئی تو وہ کمرے میں گئے اور قندیل بلوچ کو مردہ حالت میں پایا جس کے بعد انہوں نے پولیس کو اطلاع کر دی۔ سی پی او اظہر اکرام نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ قندیل بلوچ سال میں ایک دفعہ اپنے گھر والدین سے ملاقات کیلئے آتی ہیں اور وہ اس سال عیدالفطر کے دوسرے دن یہاں آئی تھیں اور تب سے یہیں رکی ہوئی تھیں۔



Share this

Related Posts

Previous
Next Post »

Comment here